I've been maintaining this blog (for better or for worse) over the last eight years. Over these years, its natural evolution has led it into becoming something of a niche place for discussion of music in general and Qawwali in particular. Rather than trying to return my existing blog to its pre-Qawwali eclectic roots, I decided I’d start anew on Tumblr. So if you’re interested in music, Qawwali and subcontinental culture, keep reading/listening/watching/commenting here. For all of the above and everything else under the sun, head on over to my Tumblr page .

Thursday, October 22, 2009

بہار ...

پھر لہو رنگ ہوئی ہے میرے گلشن کی بہار 
آگ برسی  ہے پھر اس باغ  کی  سیرابی کو 

برق اتری ہے ہر اک بام سے، ہرغنچے کا لب
پھر  سے  دہرانے  لگا   قصّہ  بیتابی  کو

لالہ  و  گل  کا  یہ رنگ ،  نوحہ  سرا  یہ  بلبل 
یہ  سماں  اہل  چمن  کے  لئے  نیا  تو  نہیں 

لیکن  اس درد  کا  یوں  حد سے گزرتے جانا 
 روز  اک  سروِ  قد   افروز  کا  گرتے  جانا

یہ تو ممکن ہے کہ اس درد سے  بے حس کردے
لیکن  اے اہلِ  چمن ،  بے حسی  دوا   تو   نہیں

اب کے  جس  طو ر سے  یہ  خونیں گھٹا اٹھی ہے 
یہ  تو  ممکن  ہے ذرا  دیر   سیاہی  ہو  گی

پر  نہ  گھبراؤ ، بہت جلد اسی   باغ  سے  ہی
لاکھوں  قندیلیں  لئے،  اہل  چمن   ابھریں  گے

بلبلیں پھر سے سنائیں گی وہی پیار کے گیت
دامنِ شب پہ ستاروں کے گہر بکھریں گے

اور ان سب کی ضیا، درد کے ماروں کے لئے 
ایک  بے  داغ  سویرے  کی   گواہی   ہو گی 

 

No comments:

Post a Comment